Announcement

Collapse
No announcement yet.

is basti kay koochay main

Collapse
X
 
  • Filter
  • Time
  • Show
Clear All
new posts

    is basti kay koochay main

    Geo or Jeenay do.

    #2
    Re: is basti kay koochay main

    Originally posted by arain munda View Post
    aankhon walo.. aankhen badi naimat hai
    We should care for each other more than we care for ideas, or else we will end up killing each other.

    Comment


      #3
      Re: is basti kay koochay main

      main idher paste ki thee pta nei kidher gye kindly ye delete kr dain
      Geo or Jeenay do.

      Comment


        #4
        Re: is basti kay koochay main

        “When our absence does not change someone’s life..,

        then accept the reality that our presence has no meaning in their life…!

        Comment


          #5
          Re: is basti kay koochay main

          Iss Basti ke Ik koochey mein , Ik Inshah Naam ka Deewana
          Ik naar pe jaan ko Har gaya , mash'hoor hai uss ka afsaana

          Uss naar mein aisa roop na tha , jis roop se din ki dhoop dabbey
          Iss shehar mein kya kya gori hai , mehtaab rukhey gulnaar labbey
          Kuch baat thi uss ki baatoo'n mein,kuch bhaid they uss ke chitwan mein
          Wuhi bhaid ke joat jagaatey hain , kisi chahney waaley ke mann mein
          Ussey apna banaey ki dhun mein , hua aap hi aap se begaana
          Iss basti ke ik koochey mein ik Inshah naam tha Deewana

          Na chanchal khail jawani ke , na piyaar ki al'harh ghaatein thein
          Bus raah mein unn ka milna tha aur phone pe unn ki baatein thein
          Iss Ishq pe ham bhi hanstey they , behasil sa behasil tha?
          Ik roz biphartey sagar mein , na kashti thi na sahil tha
          Jo baat thi in ke ji mein thi , jo bhaid tha yaksar anjaana
          Iss basti ek ik koochey mein , ik Inshah naam tha deewana

          Ik roz magar barkha rutt mein , wo bhaadoon' thi ya sawan tha
          Deewar pe beech sumandar ke , yeh dekhney waloo'n ne dekha
          mastana haath mein haath diye , yeh aik Kagar pe baithey they
          youn Shaam hui phir Raat hui , jab Sailaani ghar laot gey
          kya raat thi wo - ji chahta hai uss raat pe likhein Afsaana
          iss basti ke ik koochey mein ik Inhah naam tha deewana

          Haa'n Umar ka saath nibhaaney ke they Ehad bohat Paimaan bohat
          wo jin pe bharosa karney mein kuch sood nahi , Nuqsaan bohat
          wo Naar yeh keh kar door hui - " majboori Sajan Majboori"
          yeh wehshat se ranjoor huye aur ranjoori si ranjoori
          uss roz hamein maloom hua , uss shakhs ka mushkil samjhana
          iss basti ke ik koochey mein , Ik Inshah naam tha deewana

          Go Aag se Chaati jalti thi , Go Aankh se darya behta tha
          har aik se dukh nahi kehta tha , Chup rehta tha Gham sehta tha
          Naadaan hain wo jo chairtey hain , iss aalam mein deewanoo'n ko
          uss shakhs se aik jawab mila , sab apnoo'n ko baigaanoo'n ko
          "kuch aur kaho to Sunta hoo'n , iss Baab mein kuch mat farmana"
          iss basti ke ik koochey mein ik Inshah naam ka deewana

          Ab aagey ka Tehqeeq nahi , go sun'ney ko ham suntey they
          uss Naar ki jo jo baatein thein , uss Naar ke jo jo Qissey they
          ik Shaam jo uss ko bulwaya , kuch samjhaya bechaarey ne
          uss raat yeh qissa paak kiya , kuch kha hi liya dukhyaarey ne
          kya baat hui , kis toar hui ? Akhbaar se logoo'n ne jana
          iss basti ke ik koochey mein , ik Inshah naam tha deewana

          Har baat ki khoj to theek nahi , tum ham ko kahani kehney do
          Uss naar ka naam maqam hai kya , iss baat pe parda rehney do
          ham se bhi soda mumkin hai , tum se bhi jafa ho sakti hai
          yeh apna bayaa'n ho sakta hai , yeh apni Katha ho sakti hai
          wo naar bhi aakhir pachtaayi , kis kaam ka aisa pachtaana?
          iss basti ke ik koochey mein , ik Inshah Naam tha deewaana
          ..
          "
          اس بستی کے اِک کُوچے میں
          "


          اس بستی کے اِک کُوچے میں، اِک انشاء نام کا دیوانا
          اِک نار پہ جان کو ہار گیا، مشہور ہے اس کا افسان
          اس نار میں ایسا رُوپ نہ تھا، جس رُوپ سے دن کی دُھوپ دبے
          اس شہر میں کیا کیا گوری ہے، مہتاب رخِ گلنار لیے
          کچھ بات تھی اُس کی باتوں میں، کچھ بھید تھے اُس کے چتون میں
          وہی بھید کہ جوت جگاتے ہیں، کسی چاہنے والے کے من میں
          اُسے اپنا بنانے کی دُھن میں ہوُا آپ ہی آپ سے بیگانا
          اس بستی کے اِک کُوچے میں، اِک انشاء نام کا دیوانا

          نا چنچل کھیل جوانی کے، نا پیار کی الہڑ گھاتیں تھیں
          بس راہ میں اُن کا ملنا تھا، یا فون پہ اُن کی باتیں تھیں
          اس عشق پہ ہم بھی ہنستے تھے، بے حاصل سا بے حاصل تھا؟
          اِک روز بِپھرتے ساگر میں، ناکشتی تھی نا ساحل تھا
          جو بات تھی اُن کے دل میں تھی، جو بھید تھا یکسر انجانا
          اس بستی کے اِک کُوچے میں، اِک انشاء نام کا دیوانا

          اِک روز اگر برکھا رُت میں، وہ بھادوں تھی یا ساون تھا
          دیوار پہ بیچ سمندر کے، یہ دیکھنے والوں نے دیکھا
          مستانہ ہاتھ میں ہاتھ دئیے، یہ ایک کگر پہ بیٹھے تھے
          یُوں شام ہوئی پھر رات ہوئی، جب سیلانی گھر لوٹ گئے
          کیا رات تھی وہ جی چاہتا ہے، اُس رات پہ لکھیں افسانہ
          اس بستی کے اِک کُوچے میں، اِک انشاء نام کا دیوانا

          ہاں عمر کا ساتھ نبھانے کے تھے عہد بہت پیمان بہت
          وہ جن پہ بھروسہ کرنے میں کچھ سوُد نہیں، نقصان بہت
          وہ نار یہ کہہ کر دُور ہوئی "مجبوری ساجن مجبوری"
          یہ وحشت سے رنجور ہوئے اور رنجوری سی رنجوری؟
          اُس روز ہمیں معلوم ہوا، اُس شخص کا مشکل سمجھانا
          اس بستی کے اِک کُوچے میں، اِک انشاء نام کا دیوانا

          گو آگ سے چھاتی جلتی تھی، گو آنکھ سے دریا بہتا تھا
          ہر ایک سے دُکھ نہیں کہتاتھا، چُپ رہتا تھا غم سہتا تھا
          نادان ہیں وہ جو چھیڑتے ہیں، اس عالم میں نادانوں کو
          اس شخص سے ایک جواب ملا، سب اپنوں کو بیگانوں کو
          "کُچھ اور کہو تو سُنتا ہوں، اس باب میں کچھ مت فرمانا"
          اس بستی کے اِک کُوچے میں، اِک انشاء نام کا دیوانا

          اب آگے کا تحقیق نہیں، گو سُننے کو ہم سُنتے تھے
          اُس نار کی جو جو باتیں تھیں، اُس نار کے جو جو قصے تھے
          اِک شام جو اُس کو بُلوایا، کچھ سمجھایا بے چارے نے
          اُس رات یہ قصہ پاک کیا، کچھ کھا ہی لیا دُکھیارے نے
          کیا بات ہوئی کس طور ہوئی؟ اخبار سے لوگوں نے جانا
          اس بستی کے اِک کُوچے میں، اِک انشاء نام کا دیوانا

          ہر بات کی کھوج تو ٹھیک نہیں، تم ہم کو کہانی کہنے دو
          اُس نار کا نام،مقام ہے کیا، اس بات پہ پردا رہنے دو
          ہم سے بھی تو سودا ممکن ہے، تم سے بھی جفا ہوسکتی ہے
          یہ اپنا بیاں ہوسکتا ہے، یہ اپنی کتھا ہوسکتی ہے
          وہ نار بھی آخر پچھتائی، کس کام کا ایسا پچھتانا؟
          اس بستی کے اِک کُوچے میں، اِک انشاء نام کا دیوانا
          “When our absence does not change someone’s life..,

          then accept the reality that our presence has no meaning in their life…!

          Comment


            #6
            Re: is basti kay koochay main

            ab delete karny ki zaroorat nahin
            “When our absence does not change someone’s life..,

            then accept the reality that our presence has no meaning in their life…!

            Comment


              #7
              Re: is basti kay koochay main

              Originally posted by arain munda View Post
              main idher paste ki thee pta nei kidher gye kindly ye delete kr dain
              nahin ab aap ke chahne walon ne post kar di hai...... koi choti moti cheez nahin mili thi aap ko
              We should care for each other more than we care for ideas, or else we will end up killing each other.

              Comment


                #8
                Re: is basti kay koochay main

                15 mint lagy hain urdu waly portion ko edit karny mein
                “When our absence does not change someone’s life..,

                then accept the reality that our presence has no meaning in their life…!

                Comment


                  #9
                  Re: is basti kay koochay main

                  We should care for each other more than we care for ideas, or else we will end up killing each other.

                  Comment


                    #10
                    Re: is basti kay koochay main

                    “When our absence does not change someone’s life..,

                    then accept the reality that our presence has no meaning in their life…!

                    Comment

                    Working...
                    X