Announcement

Collapse
No announcement yet.

ہجر کی اُداسی

Collapse
X
 
  • Filter
  • Time
  • Show
Clear All
new posts

    ہجر کی اُداسی

    بے رنگ دن
    بے موج شام
    تیرے سب نشان
    میرے ارد گرد بکھرے بکھرے
    دھڑکن سے ہر اک سانس تک
    میری خاموشی
    سینے میں گونج رہی ہے
    سب حادثے جو دل کی تہہ میں ہیں
    اُن کو بھلاؤں کس طرح؟
    حَبس گھٹتا ہی نہیں
    بھلا کب تلک میں
    تیرے دھیان کو
    اپنی روح میں بسا کر
    تجھ سے گفتگو کرتا رہوں؟
    سانس سانس میں میری
    اک بے بسی سی ہے
    اک چبھن سی ہے
    تیری کمی سی ہے
    تنہائی کے یہ سلسلے
    آخر کب تلک سنبھالوں؟
    عمر بیت جاتی ہے
    چاند ڈوب جاتا ہے
    جبر کا کڑا لمحہ
    شامِ ہجر کا دریا
    مجھ میں ڈوب جاتا ہے
    تم نہیں آتے
    اور رات جیت جاتی ہے
    ہجر کی بوند بوند اُداسی
    مجھ میں ڈوب جاتی ہے
Working...
X